Zud-Pashiman – Parveen Shakir Nazam

Zud-Pashiman – Parveen Shakir Nazam

Gahre Bhure Aaankhon Wala Ek Shahzada
Dur Des Se
Chamkile Mushki Ghode Par Hawa Se Baaten Karta
Jigar Jigar Karti Talwar Se Jangal Katta Aaya
Darwazon Se Lipti Belen Pare Hatata
Jangal Ke Banhon Mein Jakde Mahl Ke Hath Chhudata
Jab Andar Aaya Tou Dekha
Shahzadi Ke Jism Ke Sare Suiyan Zang-Aluda Then
Rasta Dekhne Wali Aanhken
Sare Shekwe Bhula Chuki Then!


زود پشیمان


گہری بھوری آنکھوں والا اک شہزادہ
دور دیس سے
چمکیلے مشکی گھوڑے پر ہوا سے باتیں کرتا
جگر جگر کرتی تلوار سے جنگل کاٹتا آیا
دروازوں سے لپٹی بیلیں پرے ہٹاتا
جنگل کی بانہوں میں جکڑے محل کے ہاتھ چھڑاتا
جب اندر آیا تو دیکھا
شہزادی کے جسم کی ساری سوئیاں زنگ آلودہ تھیں
رستہ دیکھنے والی آنکھیں
سارے شکوے بھلا چکی تھیں!