thak gaya hai dil-e-wahshe mera fariyaad se bhe – PARVEEN SHAKIR

thak gaya hai dil-e-wahshe mera fariyaad se bhe

je bahalta nahen ai dost teri yaad se bhe

ai hawa kya hai jo ab nazm-e-chaman aur hua

said se bhe hain marasim tere sayyaad se bhe

kyun sarakti hui lagti hai zamin yan har dam

kabhe puchhen to sabab shahr ke buniyaad se bhe

barq the ya ke sharar-e-dil-e-ashufta tha

koi puchhe to mere aasheyan-barbaad se bhe

baDhti jati hai kashesh wada-gah-e-hasti ke

aur koi khench raha hai adam-abaad se bhe

تھک گیا ہے دل وحشی مرا فریاد سے بھی

جی بہلتا نہیں اے دوست تری یاد سے بھی

اے ہوا کیا ہے جو اب نظم چمن اور ہوا

صید سے بھی ہیں مراسم ترے صیاد سے بھی

کیوں سرکتی ہوئی لگتی ہے زمیں یاں ہر دم

کبھی پوچھیں تو سبب شہر کی بنیاد سے بھی

برق تھی یا کہ شرار دل آشفتہ تھا

کوئی پوچھے تو مرے آشیاں برباد سے بھی

بڑھتی جاتی ہے کشش وعدہ گہ ہستی کی

اور کوئی کھینچ رہا ہے عدم آباد سے بھی