taza mohabbaton ka nasha jism-o-jaan mein hai

taza mohabbaton ka nasha jism-o-jaan mein hai

pher mausam-e-bahaar mere gulsetan mein hai

ek KHwab hai ke bar-e-digar dekhte hain hum

ek aashna se raushne sare makan mein hai

tabish mein apne mahr-o-mah-o-najm se sewa

jugnu se ye zamin jo kaf-e-asman mein hai

ek shaKH-e-yasmin the kal tak Khezan-asar

aur aaj sara bagh use ke aman mein hai

KHushbu ko tark kar ke na lae chaman mein rang

itne to sujh-bujh mere baghban mein hai

lashkar ke aankh mal-e-ghanemat pe hai lagi

salar-e-fauj aur kese imtihan mein hai

har jaan-nesar yaad-dahane mein munhamik

neke ka har hesab dil-e-dostan mein hai

hairat se dekhta hai samundar meri taraf

kashti mein koi baat hai ya baadban mein hai

تازہ محبتوں کا نشہ جسم و جاں میں ہے

پھر موسم بہار مرے گلستاں میں ہے

اک خواب ہے کہ بار دگر دیکھتے ہیں ہم

اک آشنا سی روشنی سارے مکاں میں ہے

تابش میں اپنی مہر و مہ و نجم سے سوا

جگنو سی یہ زمیں جو کف آسماں میں ہے

اک شاخ یاسمین تھی کل تک خزاں اثر

اور آج سارا باغ اسی کی اماں میں ہے

خوشبو کو ترک کر کے نہ لائے چمن میں رنگ

اتنی تو سوجھ بوجھ مرے باغباں میں ہے

لشکر کی آنکھ مال غنیمت پہ ہے لگی

سالار فوج اور کسی امتحاں میں ہے

ہر جاں نثار یاد دہانی میں منہمک

نیکی کا ہر حساب دل دوستاں میں ہے

حیرت سے دیکھتا ہے سمندر مری طرف

کشتی میں کوئی بات ہے یا بادباں میں ہے