Shugun – Parveen Shakir Nazam

Shugun – Parveen Shakir Nazam

Sat Suhaganen Aur Mere Peshane!
Sandal Ke Tahrer
Bhala Patthar Ke Likhe Ko Kya Dhoege
Bas Itna Hai
Jazbe Ke Pure Neki Se
Sab Ne Apne Apne Khuda Ka Ism Mujhe De Dala Hai
Aur Ye Sunne Mein Aaya Hai
Sham Dhale Jangal Ke Safar Mein
Ism Bahut Kaam Aate Hain!


شگون


سات سہاگنیں اور میری پیشانی!
صندل کی تحریر
بھلا پتھر کے لکھے کو کیا دھوئے گی
بس اتنا ہے
جذبے کی پوری نیکی سے
سب نے اپنے اپنے خدا کا اسم مجھے دے ڈالا ہے
اور یہ سننے میں آیا ہے
شام ڈھلے جنگل کے سفر میں
اسم بہت کام آتے ہیں!