Sabhe Gunah Dhul Gae Saza He Aur Ho Gae

Sabhe Gunah Dhul Gae Saza He Aur Ho Gae

Sabhe Gunah Dhul Gae Saza He Aur Ho Gae
Mere Wajud Par Tere Gawahe Aur Ho Gae
Rafu-Garan-E-Shahr Bhe Kamal Log The Magar
Sitara-Saz Hath Mein Qaba He Aur Ho Gae
Bahut Se Log Sham Tak Kewad Khol Kar Rahe
Faqir-E-Shahr Ke Magar Sada He Aur Ho Gae
Andhere Mein The Jab Talak Zamana Saz-Gar Tha
Charagh Kya Jala Diya Hawa He Aur Ho Gae
Bahut Sambhal Ke Chalne Wali The Par Ab Ke Bar To
Wo Gul Khile Ke Shokhi-E-Saba He Aur Ho Gae
Na Jaane Dushmanon Ke Kaun Baat Yaad Aa Gae
Labon Tak Aate Aate Bad-Dua He Aur Ho Gae
Ye Mere Hath Ke Lakiren Khul Rahi Then Ya Ke Khud
Shagun Ke Raat Khushbu-E-Hena He Aur Ho Gae
Zara Se Kargason Ko Aab-O-Dana Ke Jo Shah Mile
Uqab Se Khitab Ke Ada He Aur Ho Gae

سبھی گناہ دھل گئے سزا ہی اور ہو گئی

سبھی گناہ دھل گئے سزا ہی اور ہو گئی
مرے وجود پر تری گواہی اور ہو گئی
رفو گران شہر بھی کمال لوگ تھے مگر
ستارہ ساز ہاتھ میں قبا ہی اور ہو گئی
بہت سے لوگ شام تک کواڑ کھول کر رہے
فقیر شہر کی مگر صدا ہی اور ہو گئی
اندھیرے میں تھے جب تلک زمانہ ساز گار تھا
چراغ کیا جلا دیا ہوا ہی اور ہو گئی
بہت سنبھل کے چلنے والی تھی پر اب کے بار تو
وہ گل کھلے کہ شوخیٔ صبا ہی اور ہو گئی
نہ جانے دشمنوں کی کون بات یاد آ گئی
لبوں تک آتے آتے بد دعا ہی اور ہو گئی
یہ میرے ہاتھ کی لکیریں کھل رہی تھیں یا کہ خود
شگن کی رات خوشبوئے حنا ہی اور ہو گئی
ذرا سی کرگسوں کو آب و دانہ کی جو شہہ ملی
عقاب سے خطاب کی ادا ہی اور ہو گئی