kuchh KHabar lai to hai baad-e-bahaare us ke

kuchh KHabar lai to hai baad-e-bahaare us ke

shayad is rah se guzrege saware us ke

mera chehra hai faqat us ke nazar se raushan

aur baqi jo hai mazmun-nigare us ke

aankh uTha kar jo rawadar na tha dekhne ka

wahi dil karta hai ab minnat o zare us ke

raat ke aankh mein hain halke gulabi Dore

nind se palken hui jati hain bhaare us ke

us ke darbar mein hazir hua ye dil aur phir

dekhne wali thi kuchh kar-guzare us ke

aaj to us pe Thaharti hi na thi aankh zara

us ke jate hi nazar main ne utare us ke

arsa-e-KHwab mein rahna hai ke lauT aana hai

faisla karne ke is bar hai bare us ke

کچھ خبر لائی تو ہے باد بہاری اس کی

شاید اس راہ سے گزرے گی سواری اس کی

میرا چہرہ ہے فقط اس کی نظر سے روشن

اور باقی جو ہے مضمون نگاری اس کی

آنکھ اٹھا کر جو روادار نہ تھا دیکھنے کا

وہی دل کرتا ہے اب منت و زاری اس کی

رات کی آنکھ میں ہیں ہلکے گلابی ڈورے

نیند سے پلکیں ہوئی جاتی ہیں بھاری اس کی

اس کے دربار میں حاضر ہوا یہ دل اور پھر

دیکھنے والی تھی کچھ کارگزاری اس کی

آج تو اس پہ ٹھہرتی ہی نہ تھی آنکھ ذرا

اس کے جاتے ہی نظر میں نے اتاری اس کی

عرصۂ خواب میں رہنا ہے کہ لوٹ آنا ہے

فیصلہ کرنے کی اس بار ہے باری اس کی