Khulegi Us Nazar Pe Chashm-E-Tar Aahista Aahista

Khulegi Us Nazar Pe Chashm-E-Tar Aahista Aahista

Parveen Shakir Ghazal


Khulege Us Nazar Pe Chashm-E-Tar Aahista Aahista
Keya Jata Hai Pani Mein Safar Aahista Aahista
Koe Zanjir Pher Wapas Wahin Par Le Ke Aati Hai
Kathin Ho Rah To Chhutta Hai Ghar Aahista Aahista
Badal Dena Hai Rasta Ya Kahin Par Baith Jaana Hai
Ke Thakta Ja Raha Hai Ham-Safar Aahista Aahista
Khalish Ke Sath Is Dil Se Na Mere Jaan Nikal Jae
Khinche Tir-E-Shanasai Magar Aahista Aahista
Hawa Se Sar-Kashi Mein Phul Ka Apna Ziyan Dekha
So Jhukta Ja Raha Hai Ab Ye Sar Aahista Aahista
Mere Shoala-Mizaji Ko Wo Jangal Kaise Ras Aae
Hawa Bhe Sans Leti Ho Jidhar Aahista Aahista

کھلے گی اس نظر پہ چشم تر آہستہ آہستہ


کھلے گی اس نظر پہ چشم تر آہستہ آہستہ
کیا جاتا ہے پانی میں سفر آہستہ آہستہ
کوئی زنجیر پھر واپس وہیں پر لے کے آتی ہے
کٹھن ہو راہ تو چھٹتا ہے گھر آہستہ آہستہ
بدل دینا ہے رستہ یا کہیں پر بیٹھ جانا ہے
کہ تھکتا جا رہا ہے ہم سفر آہستہ آہستہ
خلش کے ساتھ اس دل سے نہ میری جاں نکل جائے
کھنچے تیر شناسائی مگر آہستہ آہستہ
ہوا سے سرکشی میں پھول کا اپنا زیاں دیکھا
سو جھکتا جا رہا ہے اب یہ سر آہستہ آہستہ
مری شعلہ مزاجی کو وہ جنگل کیسے راس آئے
ہوا بھی سانس لیتی ہو جدھر آہستہ آہستہ