gunge labon pe harf-e-tamanna kia mujhe

gunge labon pe harf-e-tamanna kia mujhe

kes kor-chashm-shab mein sitara kia mujhe

zaKHm-e-hunar ko samjhe hue hai gul-e-hunar

kes shahr-e-na-sipas mein paida kia mujhe

jab harf-na-shanas yahan lafz-fahm hain

kyun zauq-e-sher de ke tamasha kia mujhe

KHushbu hai chandni hai lab-e-ju hai aur main

kes be-panah raat mein tanha kia mujhe

di tishnagi KHuda ne to chashme bhi de diye

sine mein dasht aankhon mein dareya kia mujhe

main yun sambhal gai ke tere bewafai ne

be-e’tibareyon se shanasa kia mujhe

wo apni ek zat mein kul kaenat tha

duniya ke har fareb se milwa diya mujhe

auron ke sath mera taaruf bhi jab hua

hathon mein hath le ke wo socha kia mujhe

bite dinon ka aks na aainda ka KHayal

bas KHali KHali aankhon se dekha kia mujhe

گونگے لبوں پہ حرف تمنا کیا مجھے

کس کور چشم شب میں ستارا کیا مجھے

زخم ہنر کو سمجھے ہوئے ہے گل ہنر

کس شہر نا سپاس میں پیدا کیا مجھے

جب حرف ناشناس یہاں لفظ فہم ہیں

کیوں ذوق شعر دے کے تماشا کیا مجھے

خوشبو ہے چاندنی ہے لب جو ہے اور میں

کس بے پناہ رات میں تنہا کیا مجھے

دی تشنگی خدا نے تو چشمے بھی دے دیے

سینے میں دشت آنکھوں میں دریا کیا مجھے

میں یوں سنبھل گئی کہ تری بے وفائی نے

بے اعتباریوں سے شناسا کیا مجھے

وہ اپنی ایک ذات میں کل کائنات تھا

دنیا کے ہر فریب سے ملوا دیا مجھے

اوروں کے ساتھ میرا تعارف بھی جب ہوا

ہاتھوں میں ہاتھ لے کے وہ سوچا کیا مجھے

بیتے دنوں کا عکس نہ آئندہ کا خیال

بس خالی خالی آنکھوں سے دیکھا کیا مجھے