gulab hath mein ho aankh mein sitara ho – Ghazal Parveen Shakir

gulab hath mein ho aankh mein sitara ho

koi wajud mohabbat ka istiara ho

main gahre pani ke is rau ke sath bahti rahun

jazira ho ke muqabil koi kenara ho

kabhe-kabhaar use dekh len kahen mil len

ye kab kaha tha ke wo KHush-badan hamara ho

qusur ho to hamare hesab mein likh jae

mohabbaton mein jo ehsan ho tumhaara ho

ye itni raat gae kaun dastaken dega

kahen hawa ka he us ne na rup dhaara ho

ufuq to kya hai dar-e-kahkashan bhe chhu aaen

musafiron ko agar chand ka ishaara ho

main apne hesse ke sukh jis ke nam kar Dalun

koi to ho jo mujhe is tarah ka pyara ho

agar wajud mein aahang hai to wasl bhe hai

wo chahe nazm ka TukDa ke nasr-para ho

گلاب ہاتھ میں ہو آنکھ میں ستارہ ہو

کوئی وجود محبت کا استعارہ ہو

میں گہرے پانی کی اس رو کے ساتھ بہتی رہوں

جزیرہ ہو کہ مقابل کوئی کنارہ ہو

کبھی کبھار اسے دیکھ لیں کہیں مل لیں

یہ کب کہا تھا کہ وہ خوش بدن ہمارا ہو

قصور ہو تو ہمارے حساب میں لکھ جائے

محبتوں میں جو احسان ہو تمہارا ہو

یہ اتنی رات گئے کون دستکیں دے گا

کہیں ہوا کا ہی اس نے نہ روپ دھارا ہو

افق تو کیا ہے در کہکشاں بھی چھو آئیں

مسافروں کو اگر چاند کا اشارا ہو

میں اپنے حصے کے سکھ جس کے نام کر ڈالوں

کوئی تو ہو جو مجھے اس طرح کا پیارا ہو

اگر وجود میں آہنگ ہے تو وصل بھی ہے

وہ چاہے نظم کا ٹکڑا کہ نثر پارہ ہو