Farogh Farrukh-Zad Ke Liye Ek Nazm – Parveen Shakir Nazam

Farogh Farrukh-Zad Ke Liye Ek Nazm – Parveen Shakir Nazam

Musaheb-E-Shah Se Kaho Ke
Faqih-E-Azam Bhe Aaj Tasdiq Kar Gae Hain
Ke Fasl Pher Se Gunahgaron Ke Pak Gai Hai
Huzur Ke Jumbish-E-Nazar Ke
Tamam Jallad Muntazir Hain
Ke Kaun Se Had Janab Jare Karen
To Tamil-E-Bandage Ho
Kahan Pe Sar Aur Kahan Pe Dastar Utarna Ahsan-Ul-Amal Hai
Kahan Pe Hathon Kahan Zabanon Ko Qata Kejiye
Kahan Pe Darwaza Rizq Ka Band Karna Hoga
Kahan Pe Aasaishon Ke Bhukon Ko Mar Dije
Kahan Batege Luan Ke Chhut
Aur Kahan Par
Rajm Ke Ahkaam Jare Honge
Kahan Pe Nau Sala Bachcheyan Chahal Sala Mardon Ke Sath
Sangen Mein Pirone Ka Hukm Hoga
Kahan Pe Iqbaali Mulzimon Ko
Kaise Tarah Shak Ka Faeda Ho

مصاحب شاہ سے کہو کہ
فقیہہ اعظم بھی آج تصدیق کر گئے ہیں
کہ فصل پھر سے گناہ گاروں کی پک گئی ہے
حضور کی جنبش نظر کے
تمام جلاد منتظر ہیں
کہ کون سی حد جناب جاری کریں
تو تعمیل بندگی ہو
کہاں پہ سر اور کہاں پہ دستار اتارنا احسن العمل ہے
کہاں پہ ہاتھوں کہاں زبانوں کو قطع کیجئے
کہاں پہ دروازہ رزق کا بند کرنا ہوگا
کہاں پہ آسائشوں کی بھوکوں کو مار دیجے
کہاں بٹے گی لعان کی چھوٹ
اور کہاں پر
رجم کے احکام جاری ہوں گے
کہاں پہ نو سالہ بچیاں چہل سالہ مردوں کے ساتھ
سنگین میں پرونے کا حکم ہوگا
کہاں پہ اقبالی ملزموں کو
کسی طرح شک کا فائدہ ہو
کہاں پہ معصوم دار پر کھینچنا پڑے گا
حضور احکام جو بھی جاری کریں گے
فقط التجا یہ ہوگی
کہ اپنے ارشاد عالیہ کو
زبانی رکھیں
وگرنہ
قانونی الجھنیں ہیں!